بیک ڈور: مہتاب عالم پرویزؔ BACK DOOR : MAHTAB ALAM PERVEZ

Rate this item
(0 votes)
بیک ڈور: مہتاب عالم پرویزؔ BACK DOOR : MAHTAB ALAM PERVEZ

                               

                                                                جناب ایڈیٹر صاحب............. بے پناہ محبتیں

                          میں اللہ کی پناہ میں ہوں اور آپ سے بھی ایسی ہی اُمیدیں وابستہ کر رکھی ہیں میں نے۔

                          خُدا آپ کو سدا اپنی اماں میں رکھے۔

                          اور.............میں بھی بخیر ہوں۔ آپ کی دُعائیں جو میرے ساتھ ہوتی ہیں۔

                         ویسے میں اپنی مصروفیت کی گتھی آپ کو کس طرح سے سلجھا سلجھا کر بتاؤں کہ ان دنوں میں قطعی اس حال میں نہیں تھا کہ آپ کو محبت کے دو بول ہی عنایت کرتا۔

                          ویسے میں رسموں بھرے سماج میں رہتا ہوں ایک ایسا ہی سماج جہاں مجھے احساس ہوتا ہے کہ کہانیاں تو اسی سماج کی دین ہیں۔ اسی معاشرے میں جنم لیتی ہیں۔ کہانی کار بھلا کیا کرسکتا ہے۔ ایک بہاؤ ہے جو اندر کے سبھی چٹانوں کو توڑ کر باہر نکل پڑتا ہے اور قلم دوڑنے لگتا ہے............

                           اور ایسے میں مجھے اسلم بدرؔ کی وہ باتیں یاد آتی ہیں...........

                        ”جدید افسانہ نگاروں میں یوں بھی فرائیڈ اور ڈی  ایچ  لارنس مقبول ہیں۔کہیں کہیں ان کے افسانوں میں جنسی خواہشات و جذبات کی آنچ تیز تر ہو کر جنسی کجروی، یہاں تک کہ کمسنوں کی جنسی بے راہ روی تک پہنچ جاتی ہے۔ ادب میں جنسیات کا میں مخالف نہیں ہوں، جنسیات تو ادب کا ایک موضوع رہا ہے۔ میں بس پرویزؔ سے اتنا کہناچاہتا ہوں کہ اس آنچ کو ذرا دھیمی رکھیں.......“

                         اور جب میں نے اس آنچ کو دھیمی رکھنے کی کوششیں کیں تو وہ لَو ہی بجھ گئی اور دور تک لا متناہی اندھیرا چھا گیا۔

                           لیکن ان اندھیروں میں بھی میری آنکھیں حیران تھیں ویسے بھی کہانی کار کافی حساس ہوتا ہے کیونکہ میری آنکھوں کا تیسرا دروازہ کُھل گیا تھا اور میں ان لا متناہی اندھیروں میں بھی دیکھ سکتا تھا۔

                        ” بیک ڈور “ کے موضوع سے آپ اختلاف کر سکتے ہیں مگر میرے رسموں بھرے اس سماج میں ایسے کردار موجود ہیں یہ اور بات ہے کہ سماج میں رہنے والے عام لوگوں کی رسائی وہاں تک نہیں ہو پاتی........

                             اُنہوں نے  ” بیک ڈور “کھول دیا تھا اور سانپ رینگتا ہوا جا رہا تھا.........

                             اور فرنٹ ڈور کے کی ہول سے باہر کی آنکھیں پرنٹ آؤٹ لے رہی تھیں........  (بیک ڈور)             

                                ” بیک  ڈور  “  ایک افسانہ ہے جسے میں نے  بطور ِخاص آپ کی بزم کے لئے لکھا ہے۔ اور اس کا پرنٹ آؤٹ آپ کے سامنے موجود ہے اور اس کا فیصلہ بھی آپ کے ہاتھوں ہی ہونا ہے۔

                                مجھے اُمید ہی نہیں بلکہ پورا یقین ہے کہ آپ میرے ساتھ انصاف کریں گے۔

                                کسی قریبی اشاعت میں  اس کہانی کوشامل کرکے مجھے شکریہ کا موقع عنایت فرمائیں اور دُعاؤں میں یاد رکھیں.......

                                اور اس خط کو بھی کہانی کے ساتھ شامل کر لیں عین نوازش ہوگی....

                                                 آپ کا.......................  مہتاب عالم پرویزؔ (کویت)

 

 

                                  بیک ڈور  BACK DOOR

                                  مہتاب عالم پرویزؔ  MAHTAB ALAM PERVEZ   

                                   (کویت)

                                                                                                                          

                                ٭ان دنوں میں جیل کی سلاخوں کے پیچھے اپنے نا کردہ گُناہوں کی سزا کاٹ رہی ہوں......

                  ”غلطیاں انسان سے ہوتی ہیں اور کُچھ غلطیاں ایسی ہوتی ہیں جسے خُدا معاف کر دیتا ہے۔ اور جب خُدا معاف کر دیتا ہے تو بندوں سے ایسی اُمیدیں کی جاسکتی ہیں۔میں تمہیں یقین دلاتا ہوں کہ تمہارے ساتھ انصاف ہوگا۔“

                                ”تم اپنی ان فلسفیانہ باتوں کو اپنے ہی دائرے حدود میں رکھو، ویسے جس روز میں نے اپنی حدوں کی سرحدیں پارکرلیں اُس روز تم لوگوں کے پاس کہنے کے لئے کُچھ بھی نہیں رہ جائے گا اور تمہاری آنکھیں حیران رہ جائیں گی اور تم سبھی یہ سوچنے پہ مجبور ہو جاؤ گے کہ واقعی میرا گُناہ کیاہے۔“

                                ”اس لیے بہتر یہی ہوگا کہ ابھی تم سبھی لوٹ جاؤاور آئندہ جو بھی ہو گا میں تم لوگوں کو اپنی ساری باتیں بتاؤں گی اور تب تم لوگوں کو احساس ہو گا کہ زندگی کتنی تلخ شئے ہے۔ یا کتنی حرامزادی ہے۔

                               

                                اور....... اُس کے بعد میرے سبھی ساتھی کالج لوٹ گئے.......

                                اور میں یہ سوچنے پہ مجبور ہو گئی کہ واقعی میرا قصور کیا ہے۔ یہی ناکہ اُس پروفیسر نے مجھے اپنی تشدد کا نشانہ بناناچاہا اور خود ہی اُس کا شکار ہو گیا۔

                               

                                تعلیم کے نام پہ تعلیم کی جتنی سیڑھیاں آج کی بیٹیاں پھلانگ رہی تھیں اُن کے لباس اُتنے ہی تنگ ہوتے جا رہے تھے۔

اور ازابند کے پھُندنے کسی گرم سلاخ کی طرح عقل کے چولہے پر آگ برسا رہے تھے۔

                                 لیکن میں اُن میں سے نہیں تھی۔

                                ” بر طانیہ کے ایک اسکول میں لڑکیوں کے اسکرٹ پہننے پر پابندی “  جیسی خبریں جب میری سماعت سے ٹکرائیں تو میں یہ سوچنے پہ مجبور ہو گئی کہ آج بھی دُنیا اس لئے قائم اور دائم ہے۔

                                لندن (ایجنسی )  دی ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ کے ایک اسکول نے لڑکیوں کو لڑکوں کے جنسی تشدد سے بچانے کے لئے اسکرٹ پہننے پر ستمبر سے  پابندی عائد کر دی ہے۔ ماؤلٹن اسکول اینڈ سائنس کالج نارتھم پٹنشیر نامی اس اسکول میں   ۱۱ سے  ۸۱  سال کی تقریباََِ  ۰۰۳ ۱ طلبہ تعلیم حاصل کر رہی ہیں۔ اس اسکول نے پابندی کے بعد صرف ڈھیلا ڈھالا کالا ٹراؤزر پہننے کی اجازت دی ہے۔ہیڈ ماسٹر ٹریور جون نے بتایا کہ یہ اہم فیصلہ لڑکیوں کو جنسی تشدد سے محفوظ رکھنے کے لئے کیا گیا ہے۔اسکول انتظامیہ نے سخت رُخ اپناتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ جو لڑکی اس فیصلے کو ماننے سے انکار کرے گی، اس کے خلاف کاروائی کی جائے گی۔ اسکرٹ پہننے کی سزا کے طور پر پُرانا کپڑا پہننے کے لئے دیا جائے گا۔ یا اسے بدلنے کے لئے گھرواپس بھیج دیا جائے گا۔ ہیڈ ماسٹر جون نے کہا کہ لڑکیوں  پر نظر رکھی جائے کہ کون سی لڑکی ہاف اسکرٹ  ران یا اس کے اوپر تک پہن کر آتی ہے  اور ضابطہ مخالفت کرنے والی لڑکی کے خلاف کاروائی

کی جائے گی۔  ”اسکرٹ پہننے والی لڑکیوں کو اسکول اور نائٹ کلب کا فرق سمجھنا  چاہئے،  ایسی لڑکیوں کے لئے اسکول سے زیادہ مناسب جگہ نائٹ کلب ہی ہے۔ ہیڈ ماسٹر نے مزید کہا کہ اسکول میں چند گھنٹے پڑھنے لکھنے اور سیکھنے میں گُذارنا چاہئے، اسکرٹ پہننے سے لڑکیوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنا یا جاتا ہے جس سے وہ پریشان ہو جا تی ہیں۔ ظاہر ہے وہ ایسی حالت میں پڑھائی لکھائی پر مطلوبہ توجہ نہیں دے سکتیں۔“

                                لیکن میں اس خبر کو سُن کر بے حد خوش تھی۔ اور میں خوش کیوں نہ ہوتی مجھے تو ایک سبیل مل گئی تھی۔ ایک راستہ مل گیا تھا ایک ایسا راستہ جس کے ذریعے میں اپنے مقصد کو عملی جامہ پہنا سکتی تھی۔

                                میں نے جس کالج میں ایڈمیشن لیا تھا وہ شہر کے پُرسکون ماحول میں بسا ہوا تھا جہاں پڑھائی پہ خاص توجہ دی جاتی تھی اور  میرا مقصد بھی یہی تھا کہ میں اعلی سے اعلی تعلیم حاصل کرسکوں اور ایک اچھّے عہدے پہ فائزہو جاؤں۔

                                میں کالج میں نئی نئی شامل ہوئی تھی اس لئے کالج کے سارے نظام اور ضابطے سے لا علم تھی۔

                                اسکول سے کالج تک کے اس سفر میں میں نے جن پُرخار راہوں کا سفر طئے کیا تھا وہ راہیں وہ سڑکیں وہ شاہراہیں آج بھی اس بات کی گواہ ہیں کہ میں نے اپنی زندگی کے نشیب و فراز کو بڑے ہی حُسن اسلوبی سے گُذار لیا تھا لیکن اس کالج کی سرحدیں، کالج کے اندر اورکالج کے باہر کے نظم و ضبط میں کافی نشیب و فراز تھا جیسے سب کُچھ تضاد کا شکار ہو۔

                                 اور..........

                                وہ پروفیسر جسے ہر لمحہ اپنی بڑھتی عمر کا احساس ستائے رہتا تھا۔ اور خود کو کلین شیو رہنا پسند تھا جس کے بالوں کی گاڑھی سیاہی اب ملگجے میں بدلنے لگی تھی۔

                                لیکن وہ اپنی اسNATURAL  تبدیلیوں کو موقع کی نزاکت اور اپنے خواہش کے حساب سے کئی رنگوں میں رنگ دیا کرتا تھا خوشبو اورلباس اُس کی پسندیدہ چیزیں تھیں۔ 

 

                                کالج کے شروع کے ہی دنوں میں مجھے اُس  پروفیسر کے پاس جانا پڑا تھا  جسے دُنیا  وشال ورما  کے نام سے جانتی تھی۔

                                کالج کے پرنسپل  اُن دنوں آؤ ٹ آؤف اسٹیشن تھے میں جیسے ہی  اُن کے چیمبر میں داخل ہوئی ایک لمحے کے لئے میرا سراپا وجود کسی سنگ تراش کے ہاتھوں تراشے ہوئے سنگ مرمر کے نیوڈ میں تبدیل ہو کر رہ گیا تھا۔ وہ صرف اس لئے کہ اُس کی باوقار

آنکھیں میرے جسم کے نشیب و فراز پہ اس طرح رینگ رہی تھیں جیسے کسی درخت کی شاخوں پہ رینگتا ہوا سانپ اپنے شکار تک پہنچ جانے کی سعی میں مصروف ہو۔

                                میں گھبرا کر لوٹ جانا چاہتی تھی کہ اُس نے فارم میرے ہاتھوں سے لے لیا تھا۔ فارم پہ سائین کرتے وقت بھی اُس کی نگاہیں میرے نشیب و فراز کو ٹٹول رہی تھیں اور مجھے ایسا محسوس ہو رہا تھا کہ اُس کی آنکھیں میرے وجود سے چپک گئی ہوں۔

                                اُس کمرے میں اے۔ سی  ہونے کے باوجود بھی میں پسینے میں شرابورہوتی جارہی تھی۔

                                ابھی میں اپنے آپ میں سنبھل بھی نہیں پائی تھی کہ اُس نے کہا۔ کافی ذہین معلوم ہوتی ہیں آپ، اور مجھے اپنے کالج میں ایسی ہی ذہین لڑکیاں اچھی لگتی ہیں۔

                                ”سر  اب میں جاؤں۔؟“

                                ”کیوں نہیں، پر جانے سے پہلے آپ اپنا نمبر اس موبائیل میں سیو کردیں تاکہ جب مجھے آپ کی کبھی ضرورت پڑے تو میں آپ کو کال کر سکوں۔؟“ اُس نے اپنا موبائیل میری طرف بڑھاتے ہوئے کہا۔

                                میری ضرورت۔؟ میری کیا ضرورت پڑ سکتی ہے  سرآپ کو۔؟

                                اب ضرورت کا کیا ہے۔؟ وہ کہتے کہتے بالکل خاموش ہو گئے تھے پر اُن کی آنکھیں بول رہی تھیں.........

میں اُن کے موبائیل میں اپنا نمبر سیو کر رہی تھی جہاں موبائیل کے ڈسپلے پہ ایک نیم عُریاں لڑکی کی تصویر آویزاں تھی۔میں کسی طرح اپنا نمبر سیو کر کے اُن کے کمرے سے باہر نکل آئی تھی۔

                                اور خود کو سنبھال لینے کی کوشش میں مصروف ہوگئی تھی کہ میرا موبائیل  ویبریٹ کرنے لگا تھا ایسے میں، میں ایک دم گھبرا گئی تھی۔

                                ویبریٹ اس لئے کہ میں نے اپنے موبائیل کو کالج کا احاطے میں ویبریٹ موڈ میں کر دیا تھا۔

                                 اور جب میں نے کال ریسیو کیا تو میں اور بھی حیران ہوگئی۔

                                ”مس  موناؔ آپ بہت خوبصورت ہیں،اور ہاں میں فون نہیں کرتا لیکن مجبوراََ فون کرنا پڑا وہ یہ کہ آپ اپنا پرس اور پن یہاں جاتے وقت بھول گئی ہیں اور میں نے آپ سے کہا تھا ناکہ مجھے آپ کے نمبر کی ضرورت پڑ سکتی ہے۔ اور وہ ضرورت  ابھی ابھی پڑ گئی آپ آ کر اپنا پن اور پرس لے جائیں۔“

                                ایک لمحے کے لئے میرے گال تمتما اُٹھے تھے لیکن میں نے بہت جلد اپنے آپ کو سنبھال لیاتھا ورنہ یہاں کالج کے اس ماحول میں کہانیاں اور افسانے بنتے دیر نہیں لگتی ہے اس بات کا احساس مجھے تھا اور میں کوئی کہانی بننا نہیں چاہتی تھی کوئی افسانہ بننا نہیں چاہتی تھی۔

                                میں نے اوکے کہہ کر موبائیل آؤف کر دیا تھا۔

                             اور جب کافی دیر گئے میرے اندر وہ ہمت یکجا ہوئی تو میں وہ پرس اور پن وہا ں سے لے آئی تھی۔

                               

                                میں کالج برابر اٹینڈ کیا کرتی تھی۔

                            کالج کے شروع کے ہی دنوں میں نے محسوس کیا کہ وشال ورماجس کی بڑی بڑی با وقار آنکھیں میرے جسم کے نشیب و فراز

کو ٹٹولا کرتی ہیں اور صرف ٹٹولاہی نہیں کرتیں بلکہ رینگتی بھی ہیں اور ایسے میں نہ جانے کیوں میرے اندر ایک ہلچل سی ہونے لگتی تھی اور جب

میں نے اپنے سراپا کا جائزہ تو احساس ہوا اور سہیلیوں کی کہی ہوئی وہ باتیں بھی یاد آگئیں کہ موناؔ تم واقعی اسمارٹ لگتی ہو اور تمہارے اندر ایک عجیب سی کشش ہے جو ہر کسی کو اپنی طرف کھینچنے پہ مجبور کرتی ہے۔ میں نے شرما کر اپنے شگُفتہ چہرے کو اپنے ہاتھوں کے چلمن میں چھُپا لیا اور

اپنے ہی وجود میں سمٹتی چلی گئی۔

                                میں نے اسکول کے زمانے کی اُن سہیلیوں کوجو میرے سنگ اس کالج میں آئی تھیں جب یہ ساری باتیں میں نے اُنہیں بتائیں تو وہ کہنے لگیں۔

                                 ” وشال ورماہیں تو کافی اسمارٹ  اُن کی باوقار آنکھیں ہر لمحہ بولتی ہوئی دکھائی دیتی ہیں لیکن اس کی ان اوچھی حرکتوں سے ایسا لگتا ہے کہ یہ شخص کریکٹر لس بھی ہے۔ کل کالج کی کُچھ لڑکیاں اسی پروفیسر کے بارے میں اُلٹی سیدھی باتیں کر رہی تھیں اس میں کہاں تک سچائی تھی ان ساری باتوں سے  میں بھی بالکل نہ آشنا تھی۔“

                                میرے ذہن میں ڈھیر سارے کے سوالات اور طرح طرح کے خیالات جنم لینے لگے تھے۔  وشال ورمامیری خوبصورتی سے وہ اتنا امپریس ہوئے تھے کہ میری زُلفوں کے اسیر ہو گئے تھے اور پھر مجھ سے ملنے کے نئے نئے بہانے تلاش کرنے لگے تھے۔

                                اور.........

                                شاید میں بھی اگر اُنہیں ایک پل نہ دیکھوں نمجھے چین نہیں ملتا تھا نہ جانے کیوں میں اُن کی طرف کھنچتی ہی چلی جا رہی تھی۔ یا پھر اُن کی کشش مجھے خود بخود اُن کے سحر میں مبتلاء کرنے لگی تھی۔

                                وہ برسات کا موسم تھا۔

                                کالج آجانے کے بعد سے ہی ہلکی ہلکی بارش شروع ہو گئی تھی۔ اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے سارا آکاش بادلوں سے ڈھک گیا تھا۔ بجلیاں کوند کوند کر ماحول کو اور بھی ڈراؤنا بنا رہی تھیں، اور ہوائیں تیز تیز چلنے لگی تھیں۔ کالج کی زیادہ تر لڑکیاں موسم کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے اپنے اپنے گھروں کو لوٹ چکی تھیں۔میرا آخری کلاس ابھی باقی تھا  اگر میرا یہ آخری کلاس نہ ہوتا تو میں بھی جا چُکی ہوتی۔

                                ابھی میں ان ہی ساری باتوں میں گھری ہوئی تھی کہ میرے موبائیل نے ویبریٹ کیا۔ میں ایک دم چونک پڑی۔

                                 اور جب میں نے کال ریسیو کیا  تومیں ششدر رہ گئی۔

                                مونا ؔآپ وہاں کھڑی ہو کر کیا کر رہی ہیں۔؟

                                ”بس یوں ہی بارش کی پھوہاروں سے کھیل رہی ہوں اوربارش کی پھوہاروں کو میں اپنے اندر محسوس کر رہی ہوں۔“

                                ”میں یہاں اپنے کیبن سے ہاہر کے سارے منظر کو دیکھ رہا ہوں۔ میں یہ بھی اچھی طرح سے جانتا ہوں کہ آپ اس وقت بالکل فری ہیں اور آپ کا آخری کلاس تقریباََ ساڑھے سات بجے سے شروع ہوگااوراس وقت سات بج رہا ہے۔ آپ آجائیں باہر بارش ہورہی ہے اور ایسے موسم میں آپ کے ساتھ کافی پینے کو دل کر رہا ہے۔“

                                ”کافی پینے کا  تومیرا بھی دل کر رہا ہے اور کالج کا کینٹین بھی بند ہو چُکا ہے۔ آپ کافی پی لیں  سر یہاں میں اپنی ڈھیر ساری سہیلیوں میں گھری ہوئی ہوں۔“

                                ”اتنی ساری سہیلیوں میں گھر کر بھی آپ اپنے آپ کو تنہا ہی محسوس کر رہی ہوں گی۔“

                                ”وہ تو ہے۔“

                                ”آپ اتنی ذہین ہو کر بھی اس طرح کی باتیں کر رہی ہیں۔؟آپ بہانے بناکر تو یہاں آ سکتی ہیں۔“

                                ”روز روز میں اور کتنے بہانے بناؤں۔؟ ویسے بھی میری سہیلیاں جب بھی مجھے آپ کے سنگ باتیں کرتے ہوئے دیکھتی ہیں تو آپ کے متعلق ڈھیر ساری باتیں کرتی ہیں اور میرے پاس سوائے خاموشی کے کُچھ بھی تو نہیں رہتا ہے۔“

                                ”آپ جن ڈھیر ساری سہیلیوں کی باتیں کررہی ہیں میں اُن تمام  میں سے زیادہ ترسہیلیوں کے روم روم سے واقف ہوں۔ دراصل آپ کی ساری سہیلیاں آپ کی خوبصورتی سی جلتی ہیں آپ کی شان وشوکت سے حسد رکھتی ہیں۔ اور رہی باتیں بنانے کی  توآپ کی اُن سہیلیوں کے پاس رہ ہی کیا گیا ہے سوائے اس کے کہ اب کسی پُرانے قصّے کہانیوں کی طرح آپ کے اور ہمارے ان رشتوں کو

بھی اپنے اندر گُم کر کے کسی نئی کہانیوں کو جنم دیں گی اور کہانیاں تو ایسے ہی معاشرے میں جنم لیتی ہیں۔ دیکھئے آپ انکار نہ کریں ورنہ ہم ناراض ہو جائیں گے۔“

                                میں نے کوئی جواب نہیں دیا اور سہیلیوں سے بہانے بنا کر اُن کے چیمبر میں داخل ہوگئی۔

                                 چیمبر میں داخل ہوتے ہی اُنہوں نے ڈور اندر سے لوک کردیا تھا کافی پینے کاتو ایک بہانا تھا۔

 

                                 کافی پینے کو دوران میں اُس چیمبر سے باہر کے سارے مناظر کو بہ آسانی دیکھ رہی تھی۔چیمبر کے سامنے کُھلنے والی بڑی کھڑکی میں کالے اور موٹے گلاس کا استعمال کیا گیا تھا۔ اور اس گلاس کی یہ خوبی تھی کی کمرے کے اندر سے باہرکی تمام چیزوں کو باآسانی دیکھا جا سکتا تھا لیکن کمرے کے اندر کے ہونے والی ساری حرکتوں کا لوگوں کو علم نہیں ہوتا تھا۔

                                میں نے کافی پی کر جیسے ہی کپ ٹیبل پہ رکھا اُنہوں نے مجھے پیچھے کی طرف سے اپنی بانہوں میں بھر لیا۔

                                ”سر یہ آپ کیا کر رہے ہیں۔؟ میں اُن لڑکیوں میں سے نہیں جیسا آپ مجھے سمجھ رہے ہیں۔“

                                ”یہ ڈائیلاگ میں اتنی بار سُن چُکا ہوں کہ یہ الفاظ اب اپنے معنی کھو چُکے ہیں یا میں ان ساری باتوں کا عادی ہو گیا ہوں۔“

                                میں بارش کی پھوہار سے پہلے ہی بھیگی ہوئی تھی اُن کی بانہوں میں آکر اور بھی بھیگنے لگی.......بھیگتے ہی کئی رنگ کینوس پر آئے اور آپس میں گُڈ مُڈ ہوگئے۔

                                باہربارش زورو شور سے ہونے لگی تھی ہوائیں تیز تیز چلنے لگی تھیں اور بجلیاں کوندرہی تھیں اور میں اُن کی بانہوں میں سماتی جا رہی تھی کہ میرے اندر کے سانپ نے پھن کاڑھ لیا تھا۔ جیسے ہی اُن کی نگاہ اُس پھن کاڑھے ہوئے سانپ پہ پڑی وہ نیچے سے اوپر تک مجھے دیکھتے ہی رہ گئے اور اُن کی آنکھیں پھیلتی ہی چلی گئیں.........

                                اُنہوں نے بیک ڈور کھول دیا تھا اور سانپ بیک ڈور سے رینگتا ہوا جا رہا تھا..........

                                اور فرنٹ ڈور کے کی ہول سے باہر کی آنکھیں پرنٹ آؤٹ لے رہی تھیں.......

 

                                                                                    ()()()()()

                               

 

 

                                                                                                 مہتاب عالم پرویزؔ  (کویت)

                                                                                 E - Mail    This e-mail address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.                             

 

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

نیا مضمون

Calendar

« March 2019 »
Mon Tue Wed Thu Fri Sat Sun
        1 2 3
4 5 6 7 8 9 10
11 12 13 14 15 16 17
18 19 20 21 22 23 24
25 26 27 28 29 30 31

ممبر لاگ ان

Go to top