متفرق غزلیات : (اسلم بدر) جمشید پور

Rate this item
(2 votes)
متفرق غزلیات : (اسلم بدر) جمشید پور

وادئ جاں میں جاں بہ لب اترے
پاؤں اپنے زمیں پہ اب اترے

ہو رہا ہے غبارِ شام بلند
اب تو ہونے کی تاب و تب اترے

پردۂ برگ گل میں لمس بدن
خوشبو و رنگ لب بہ لب اترے

خواب میں کچھ نقوش بے معنی
بے طلب اترے بے سبب اترے

بھول کر درد اپنے سب آداب
میرے زخموں میں بے ادب اترے

جھانجھنے چاندنی کی بجنے لگیں
شام کی سیڑھیوں سے شب اترے

کتنے بے نام ذائقے اسلمؔ
میری آنکھوں میں بے نسب اترے

دنیا سب کی داسی ہے


کیا یہ بات ذرا سی ہے

مٹی سے نوری حد تک
سیڑھی ایک دعا سی ہے

چھونے سے اپنانے تک
ہر تازہ پل باسی ہے

بھوگ کے سارا سکھ سنسار
جوگن من سنیاسی ہے

صحرا کی چُپ ہے سیراب
بہتی ندّی پیاسی ہے

وقت کچھ ایسا ہے ہم پر
تتلی بھی بھونرا سی ہے


Last modified on

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

نیا مضمون

Calendar

« March 2019 »
Mon Tue Wed Thu Fri Sat Sun
        1 2 3
4 5 6 7 8 9 10
11 12 13 14 15 16 17
18 19 20 21 22 23 24
25 26 27 28 29 30 31

ممبر لاگ ان

Go to top