السبت, 09 أيار 2015 20:01

غزل: رضواں ؔ واسطی

Rate this item
(0 votes)

غزل


رضواں ؔ واسطی


کوئی کشتی کا ناخدا ہے نا
لاکھ طوفان ہو، خدا ہے نا
بے زبانی زبان کی تاثیر
لب پہ خاموش مدّعا ہے نا
پیاسی نظروں سے پینا جرم ہے کیا
مے کدہ آنکھوں کا کھلا ہے نا
عشق کا ہر قدم مبرّم ہے
رَہ معلّق تو حسن کا ہے نا
فرق رجحان اور سمجھ کا ہے
چاندنی سے بھی گھر جلا ہے نا
شعر بازیگری ہے لفظوں کی
ذہن معنیٰ بھی ڈھونڈتا ہے نا
میری چُپ بھی لگے انہیں تکرار
بولو رضواں ؔیہ انتہا ہے نا

 

Read 3428 times

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.

Latest Article

Contact Us

RAJ MAHAL, H. No. 11
CROSS ROAD No. 6/B
AZAD NAGAR, MANGO
JAMSHEDPUR- 832110
JHARKHAND, EAST SINGHBHUM, INDIA
E-mail : mahtabalampervez@gmail.com

Aalamiparwaz.com

Aalamiparwaz.com is the first urdu web magazine launched from Jamshedpur, Jharkhand. Users can submit their articles, mazameen, afsane by sending the Inpage file to this email id mahtabalampervez@gmail.com, aslamjamshedpuri@gmail.com