الجمعة, 02 تشرين1/أكتوير 2015 13:27

غزل : نورؔ جمشیدپوری

Rate this item
(0 votes)

 

غزل

نورؔ جمشیدپوری

 دل سے دل کا جب تلک کہ رابطہ ہوتا نہیں

 پیار کہتے ہیں جسے وہ حادثہ ہوتا نہیں

 بارہا سوچا کہ بڑھ کر ہاتھ اسکا تھام لیں

 حوصلہ کرتے ہیں لیکن حوصلہ ہوتا نہیں

 بس رہا تھا سانس بن کر کل تلک جو روح میں

مدتوں اب اس کو مجھ سے واسطہ ہوتا نہیں

 ایک دوجے کو بھلا کیسے بنیں گے ہم خیال

 اس سے جب تک گفتگو کا سلسلہ ہوتا نہیں

 ہم بڑھاتے دو قدم گر وہ بھی آتا دو قدم

 آگیا ہے درمیاں جو فاصلہ ہوتا نہیں

 دل کی ویرانی مرے چہرے پہ پڑھ پاتا اگر

 اس طرح سے آج مجھ پر وہ خفا ہوتا نہیں

 چاہتا ہے ہر گھڑی دل نور کی قربت مگر

  پیار بھی تو اس سے لیکن برملا ہوتا نہیں

Read 2643 times

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.

Latest Article

Contact Us

RAJ MAHAL, H. No. 11
CROSS ROAD No. 6/B
AZAD NAGAR, MANGO
JAMSHEDPUR- 832110
JHARKHAND, EAST SINGHBHUM, INDIA
E-mail : mahtabalampervez@gmail.com

Aalamiparwaz.com

Aalamiparwaz.com is the first urdu web magazine launched from Jamshedpur, Jharkhand. Users can submit their articles, mazameen, afsane by sending the Inpage file to this email id mahtabalampervez@gmail.com, aslamjamshedpuri@gmail.com