الإثنين, 19 تشرين1/أكتوير 2015 23:07

غزل : احمد نثارؔ

Rate this item
(0 votes)

 غزل
 شاعر : احمد نثارؔ

دیارِ عشق میں تنہا کھڑا، کھڑا ہی رہا
محبتوں کے نگر میں پڑا، پڑا ہی رہا

ثمر خلوص و محبت کے تازہ تر ہی رہے
کدورتوں کا ثمر تھا سڑا، سڑا ہی رہا

تھے خواب جتنے بھی تعبیر سے پرے، لیکن
نگاہِ ناز کا شیدا، اڑا، اڑا ہی رہا

وہ چھوٹی سوچ کا مالک، سمٹ گیا لیکن
خیال و فکر میں جو تھا بڑا، بڑا ہی رہا

ہوا کے ساتھ سفر کر، جہاں میں پھیل گیا
انا کی قبر میں جو تھا گڑا، گڑا ہی رہا

ذرا سی تند پہ شاخوں سے گر گئے پتے
درخت جو بھی زمیں سے جڑا، جڑا ہی رہا

وہ ظرف چھوٹا تھا، پانی بھی کم ملا اس کو
جو اعلی ظرف کا مالک گھڑا، گھڑا ہی رہا

نثارؔ آپ تلاتم سے کھیلتے ہی رہے
یہ زندگی کا سفر تھا کڑا، کڑا ہی رہا
٭٭٭٭٭
شاعر : احمد نثارؔ، شہر پونہ، مہاراشٹر، انڈیا۔ Email: عنوان البريد الإلكتروني هذا محمي من روبوتات السبام. يجب عليك تفعيل الجافاسكربت لرؤيته.

Read 3378 times

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.

Latest Article

Contact Us

RAJ MAHAL, H. No. 11
CROSS ROAD No. 6/B
AZAD NAGAR, MANGO
JAMSHEDPUR- 832110
JHARKHAND, EAST SINGHBHUM, INDIA
E-mail : mahtabalampervez@gmail.com

Aalamiparwaz.com

Aalamiparwaz.com is the first urdu web magazine launched from Jamshedpur, Jharkhand. Users can submit their articles, mazameen, afsane by sending the Inpage file to this email id mahtabalampervez@gmail.com, aslamjamshedpuri@gmail.com