الجمعة, 24 أيار 2019 17:22

غزل : دلشاد نظمی

Rate this item
(0 votes)

غزل 
دلشاد نظمی 

 

گھُٹی صدا کو کبھی مصلحت رہائی دے
میں چاہتا ہوں مری چیخ بھی سنائی دے

نظر ہٹے کبھی خود سے تو کچھ نظر آئے 
خدا کرے تجھے کچھ اور بھی دکھائی دے

اسی کے ہاتھوں سے اترے گی نتھ سیاست کی
جو رونمائی سے پہلے ہی منھ دکھائی دے

لکھوں تو متن مرا سرخیوں سے بھر جائے 
رگِ قلم کے لئے ایسی روشنائی دے

بھٹک گیا ہوں میں دنیا تلاش کرتے ہوئے 
خدایا مجھ کو کبھی خود سے آشنائی دے

اس اجنبی سے کنکشن بحال کرنا ہے 
اسے کہو وہ تعلق کی وائی فائی دے

اس عمر میں مجھے دلشاد چاہیئے عزت
میں چاہتا نہیں بیٹا مجھے کمائی دے

 

دلشاد نظمی

Read 1908 times

Leave a comment

Make sure you enter all the required information, indicated by an asterisk (*). HTML code is not allowed.

Latest Article

Contact Us

RAJ MAHAL, H. No. 11
CROSS ROAD No. 6/B
AZAD NAGAR, MANGO
JAMSHEDPUR- 832110
JHARKHAND, EAST SINGHBHUM, INDIA
E-mail : mahtabalampervez@gmail.com

Aalamiparwaz.com

Aalamiparwaz.com is the first urdu web magazine launched from Jamshedpur, Jharkhand. Users can submit their articles, mazameen, afsane by sending the Inpage file to this email id mahtabalampervez@gmail.com, aslamjamshedpuri@gmail.com